Baloch Liberation Army, for the first time, introduces its official channel on Telegram

Baloch Liberation Army, for the first time, introduces its official channel on Telegram

Baloch Liberation Army has introduced its official channel on one more social networking site, Telegram.

Formerly, BLA could be accessed through merely twitter and its official website “Baloch Liberation Voice”. However, For the first time, BLA is introducing its official channel on one more social networking site, Telegram respectively, which can be subscribed through following links and user IDs.

To subscribe the official media channel of Baloch Liberation Army on Telegram, it can be accessed through the following user ID or link given below.
User ID:
Baloch_Liberation_Voice
Link:
https://t.me/Baloch_Liberation_Voice

Apart from this, if you have not followed the official twitter account of BLA yet, you can approach the account through the following source.

User ID:
BalochArmy__
Link:
https://twitter.com/BalochArmy__?s=09

Apart from twitter, the official website of Baloch Liberation Army can be visited through the link given below

Link:
https://balochliberationvoice.home.blog/

بلوچ لبریشن آرمی نے سماجی رابطوں و سوشل میڈیا کے مزید ایک مائیکرو ویب سائٹ، ٹیلی گرام پر اپنا آفیشل چینل متعارف کرا دیا.

اس سے پہلے بلوچ لبریشن آرمی کے محض ٹویٹر اکاؤنٹ اور آفیشل ویب سائٹ ” بلوچ لبریشن وائس” پر رسائی حاصل کیا جاسکتا تھا تاہم پہلی مرتبہ بی ایل اے کی جانب سے ایک اور سماجی رابطے کی مائیکرو ویب سائٹ، ٹیلی گرام پر اپنا چینل متعارف کرایا گیا ہے ،جسے نیچے دیئے گئے لنک اور یوزر آئی ڈیز کی مدد سے فالو اور سبسکرائب کیا جاسکتا یے.

بلوچ لبریشن آرمی کے ٹیلی گرام پر آفیشل میڈیا چینل کو سبسکرائب کرنے کیلئے درج ذیل یوزر آئی ڈی یا لنک کی مدد سے رسائی حاصل کی جاسکتی ہے:
User ID:
Baloch_Liberation_Voice
Link:
https://t.me/Baloch_Liberation_Voice

اس کے علاوہ اگر آپ نے بی ایل اے کے پہلے سے زیر استعمال ٹویٹر اکاؤنٹ کو ابھی تک فالو نہیں کیا ہے تو آپ درج ذیل ذرائع سے اکاؤنٹ تک رسائی حاصل کرسکتے ہیں۔
User ID:
BalochArmy__
Link:
https://twitter.com/BalochArmy__?s=09

ٹویٹر کے علاوہ نیچے دیئے گئے لنک کے ذریعے بلوچ لبریشن آرمی کے آفیشل ویب سائٹ Baloch Liberation Voice کو وزٹ کیا جاسکتا ہے۔
Link:
https://balochliberationvoice.home.blog/

Balochistan: We attacked Pakistan army military garrison in Kohistan Marri, several killed and wounded

Balochistan, 27 July 2020: Our freedom fighters have conducted an operation against the occupying Pakistani army in Balochistan’s district Kohlu on Monday and caused heavy losses to enemy forces.

We have fired two BM12 rockets at a military garrison of Pakistani forces in Makhmaad’s Talingokh area which landed inside the military garrison causing heavy.

Several Pakistani troops have been wounded and killed during this attack by our freedom fighters.

We also want to clarify that Qaisar Khan Chalgari Marri who was martyred on 16 July in Nishpa area in Harnai Balochistan during an offensive of occupying forces of Pakistan was a veteran and committed associate of the Baloch Liberation Army.

The occupying Pakistani army surrounded the entire area and his house and demanded him to surrender but Qaisar Khan Marri resisted bravely and defended the sanctity of his house instead of surrendering.

He fought face-to-face against the Pakistani army and killed at least four Pakistani troops before he was martyred. The Pakistan forces, as it is their nature, did not even spare his teenage niece and martyred her.

Shaheed Qaisar Khan Marri had been associated with Baloch national struggle for freedom since 1973 during Bhutto’s era, at that time he was a young man. In these 47 years of his service in freedom struggle Balochistan, he faced many challenges.
Pakistan army tried to buy his loyalties and he was offered lucrative to abandon freedom struggle but he always refused to compromise. He remained committed to the ideology of Baloch national freedom till his last breath.

He will be remembered in Golden words in Baloch history and the organization (BLA) respects and values his contribution to struggle and his commitment.

We reiterate the determination that our struggle for a free and sovereign Baloch state will continue till the Baloch nation gains its objective of independent Balochistan.

BLA accepts the responsibility for the attack on Pakistan Army’s camp in Kahaan. Martyr Qaisar Marri was an inveterate and a special member of Baloch Liberation Army

بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان آزاد بلوچ نے نامعلوم مقام سے سیٹلائٹ فون پر میڈیا نمائندوں کو جاری کردہ بیان میں کہا کہ گزشتہ روز سہ پہر 3 بجے کے قریب ہمارے سرمچاروں نے کوہلو کے علاقے کاہان میں قائم مخماڑ ٹلینگوخ فوجی چھاونی پر بی ایم بارہ میزائلوں سے حملہ کیا۔ علاوہ ازیں انہوں نے یہ بھی کہا کہ رواں ماہ کے 16 تاریخ کو ہرنائی میں قابض پاکستانی فوج کی جارحیت کے دوران شہید ہونے والے قیصر چھلگری مری تنظیم کے دیرینہ اور بیش قیمت ساتھیوں میں سے تھے۔

تفصیلات بیان کرتے ہوئے ترجمان نے کہا کہ گزشتہ روز مقامی وقت کے مطابق 3 بجے کے قریب ہمارے سرمچاروں نے مقبوضہ بلوچستان کے علاقے کوہلو تحصیل کاہان میں مخمار ٹلینگوخ فوجی چھاونی پر بی ایم 12 کے دو میزائل داغے جو چھاونی کے احاطے میں جا گرے اور زور دار دھماکوں سے پھٹ گئے جس کے نتیجے میں پاکستانی فوج کے متعدد اہلکار ہلاک و زخمی ہو گئے۔ اس حملے کی زمہ داری ہماری تنظیم بلوچ لبریشن آرمی قبول کرتی ہے۔

ترجمان نے مزید کہا کہ رواں ماہ 16 جولائی کو بلوچستان کے علاقے ہرنائی، نشپا میں قابض پاکستانی فوج نے تنظیم کے شہید ساتھی قیصر مری کے علاقے اور گھر کا محاصرہ کیا اور انہیں سرنڈر کرنے کی دعوت دی جس پر شہید قیصر مری نے بھرپور مزاحمت کو ترجیح دیا۔ پاکستانی فوج کے ساتھ دو بدو لڑائی میں چار اہلکاروں کو ہلاک کر کے قیصر خان مری نے انتہائی دلیری سے جام شہادت نوش کیا۔ جس کے بعد قبضہ گیر فوج نے حسب فطرت ظلم کا سلسلہ رواں رکھتے ہوئے شہید قیصر مری کی نوعمر معصوم نواسی تک کو نہ بخشا اور انہیں بھی شہید کردیا۔

شہید قیصر خان چھلگری مری سنہ 1973 کو بھٹو کے دور حکومت میں فوجی جارحیت کے دوران بلوچ قومی تحریک سے منسلک ہوئے، اس وقت وہ ایک کمسن نوجوان تھے۔ اس 47 سالہ جہد میں انہیں ریاستی اداروں نے کئی بار مراعات کی پیشکش کرتے ہوئے پیغام بیجھا کہ وہ قومی جہد سے دستبردار ہوکر پاکستانی فوج کے سامنے سرنڈر کرے۔ مگر ہزاروں مشکلات اور تکالیف کے باوجود انہوں نے آخری دم تک بلوچ قومی فکر کو سینے سے لگائے رکھا جس پر بلوچ تاریخ انہیں ہمیشہ سنہرے القاب سے یاد رکھے گا۔ تنظیم قیصر مری کی کردار، جہد اور کمٹمنٹ کو قدر کی نگاہ سے دیکھتی ہے ۔

آزاد بلوچ نے آخر میں یہ عزم کیا کہ ہماری جہد ایک آزاد اور خودمختار بلوچستان کے قیام تک جاری رہے گا۔

We have not carried out the Karachi Stock Exchange attack. Baloch Liberation Army

We want to inform the Baloch nation and the international community that the BLA has nothing to do with the Karachi Stock Exchange attack. Attacking public places is not part of our strategy. The young men used in the attack were never part of the BLA.

The elements that carried out the attack using the BLA’s name have long since been expelled from the organization. Bashirzaib, an area commander, was suspended for violating the organization’s discipline and later his basic membership was revoked.

While he was suspended, he had formed an organizational alliance called BRAS with Gulzar Imam, an expelled member of Baloch Republican Army (BRA) and the BLF, also the BLA was declared an ally of BRAS, which we denied through our statements at that time.

This armed coalition is run under the supervision of the Iranian Intelligence Agency. We explained our position in our statements of December, 2017, August 2018 and then July 2019.

The four youths who took part in the attack on the Karachi Stock Exchange on Monday, have never been part of the BLA in the past or in the present. Tasleem Baloch alias Muslim, Shehzad Baloch alias Cobra and Siraj Kungur alias Yagi were members of the BRA’s splinter group who worked under Gulzar Imam. While Salman Hamal alias Notak was first a member of BRA and later he joined BLF.

The participants in the mission were neither BLA members nor were they affiliated with the expelled group that accepted the responsibility of KSE (Karachi Stock Exchange) attack using BLA’s name.

What is the reason that those who formed a coalition in the name of BRAS but do not associate their activities with the name of their organization? Despite being an ally, why don’t the BLF and Gulzar Imam want to include their names in such attacks?

The BLA considers Iran an occupying state just like Pakistan.

Our organization (BLA) has never compromised with Iran and always made organizational decisions in the Baloch national interest. That is why today, at the behest of Iran, deliberate attempts are being made to make the BLA’s reputation globally controversial so that the BLA doesn’t succeed in achieving Baloch national interests in the current changing geopolitical situation in the region.

Such attacks have strengthened the narrative of enemy states instead of the Baloch national movement which is succeeding in justifying these attacks and making the Baloch independence movement a global terrorist movement.

The Baloch youth have to make wise decisions at every step so that they are not exploited by such opportunist elements. There are many examples in the movements of the world in which the enemy has hatched conspiracies by infiltrating its agents in freedom movements.

Pakistan occupied Balochistan in 1948 in violation of International Laws and today China and Pakistan, both occupiers, are violating international law in Balochistan. Despite gross human rights violations against Baloch nation and disregard of international convention by China and Pakistan, BLA made every effort to adhere and follow to the international laws of war and our first priority has always been Baloch national interests.

We assure the Baloch nation that the liberation struggle against the Pakistani state occupation will continue till regaining of Baloch sovereignty and the formation of independent Balochistan.

کراچی اسٹاک ایکسچینج پر حملے سے بی ایل اے کا کوئی تعلق نہیں۔ بلوچ لبریشن آرمی

بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان آزاد بلوچ نے نامعلوم مقام سے میڈیا کو جاری کردہ اپنے بیان میں گزشتہ روز کراچی اسٹاک ایکسچینج پر ہونے والے حملے سے لاتعلقی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس حملے سے بی ایل اے کا کوئی تعلق نہیں اور نہ ہی عام عوام پر حملے کرنا ہمارے حکمت عملی کا حصہ ہے۔ حملے میں استعمال ہونے والے نوجوان کبھی بی ایل اے کا حصہ تھے ہی نہیں۔

جن عناصر نے بی ایل اے کا نام استعمال کرکے یہ حملہ کروایا تھا ان کو تنظیم سے بہت پہلے ہی فارغ کیا جاچکا ہے۔ ان میں سر فہرست بشیرزیب نامی کمانڈر کو معطل کرنے کے بعد ان کی بنیادی رکنیت بھی ختم کردی گئی تھی۔ اس دوران انہوں نے بی ایل ایف اور بی آر اے کے فارغ شدہ کمانڈر گلزار امام کے ساتھ مل کر براس نامی تنظیمی اتحاد تشکیل دی تھی جس میں بی ایل اے کو ان کا اتحادی ظاہر کیا گیا تھا جس کی تردید ہم نے بیانات کے ذریعے کی تھی۔ اس مسلح اتحاد کو ایرانی انٹیلیجنس ایجنسی کی سرپرستی میں چلایا جاتا ہے۔ دسمبر، 2017 ، اگست 2018 اور پھر جولائی 2019 کے بیانات ہماری موقف کی وضاحت کرتے ہیں۔

آزاد بلوچ نے کہا کہ گزشتہ روز کراچی اسٹاک ایکسچینج پر حملے میں حصہ لینے والے چار نوجوان نا ماضی میں اور نا ہی حال میں کبھی بی ایل اے کا حصہ رہے ہیں۔ تسلیم بلوچ عرف مسلم، شہزاد بلوچ عرف کوبرا اور سراج کنگر عرف یاگی، بی آر اے کے رکن تھے جو گلزار امام کے ماتحت کام کرتے تھے۔ جبکہ سلمان حمل عرف نوتک پہلے بی آر اے کے رکن تھے اور بعد میں وہ بی ایل ایف میں شامل ہوگئے تھے۔ جس مشن میں حصہ لینے والے نہ بی ایل اے کے رکن تھے اور نہ ہی ان کا تعلق بی ایل اے سے فارغ ہونے والے افراد سے تھا جنہوں نے بی ایل اے کا نام استعمال کرکے جھوٹی قبولیت لی۔ تو پھر کیا وجہ ہے کہ براس نامی اتحاد کو قائم کرنے والی تنظیمیں اس طرح کی کاروائیوں کو اپنے تنظیم سے نہیں جوڑتی؟ اتحادی ہونے کے باوجود کیوں گلزار امام سمیت بی ایل ایف اس طرز کے حملوں میں اپنے نام کو شامل نہیں کرتی ہیں؟ بی ایل اے ایران کو پاکستان کی طرح ایک قبضہ گیر ریاست سمجھتی ہے۔

بی ایل اے نے ایران سے سازباز نہیں کی اور ہمیشہ قومی مفادات کو مدنظر رکھتے ہوئے تنظیمی فیصلے کیے، یہی وجہ ہے کہ آج ایران کی ایما پر جان بوجھ کر بی ایل اے کی ساکھ کو عالمی سطح پر متنازعہ بنانے کی کوشش کی جاری ہے تاکہ خطے میں بدلتے ہوئے جیوپولیٹیکل حالات میں بی ایل اے بلوچ قومی مفادات کو حاصل کرنے میں ناکام ہوسکے !

آزاد بلوچ نے کہا کہ ایسے حملوں سے بلوچ قومی تحریک کے بجائے دشمن ریاستوں کے موقف کو تقویت پہنچی ہے جو ان حملوں کو جواز بنا کر بلوچ تحریک آزادی کو عالمی سطح پر ایک دہشتگرد تحریک قرار دلوانے میں کامیاب ہورہے ہیں۔ بلوچ نوجوانوں کو ہر قدم پرسوچ سمجھ کر فیصلہ کرنا ہوگا تاکہ وہ ایسے عناصر کے ہاتھوں استعمال نا ہو۔ دنیا کی تحریکوں میں ایسی بہت سی مثالیں ملتی ہیں جن میں دشمن نے اپنے ایجنٹ داخل کروا کر سازشیں رچائی ہیں۔

آزاد بلوچ نے آخر میں کہا کہ پاکستان نے عالمی قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بلوچستان پر 1948 کو قبضہ کیا تھا اور آج چینی و پاکستانی قبضہ گیر بلوچستان میں عالمی قوانین کی خلاف ورزی کر رہے ہیں لیکن اس کے باوجود بی ایل اے ہر ممکن کوشش کرتی آرہی ہے کہ اس جنگ میں جنگی قوانین کی پاسداری کرے۔

آزاد بلوچ نے کہا پاکستانی ریاست کے خلاف ہماری جنگ آزاد بلوچستان کی تشکیل تک جاری رہیگی۔

BLA accepts the responsibilities for the bomb attack on Pakistani forces in Kahaan on Friday at 1:45 PM. Several killed or injured.

The Baloch Liberation Army’s spokesperson Azad Baloch in a statement said to media has accepted the responsibilities of attacking on Pakistan army convoy in Kahaan and destroying a power tower in Rakhni.

BLA spokesperson Azad Baloch called to media persons from unknown location and said that liberation fighters from his organization (BLA) had attacked an army convoy, consisting of eight vehicles, by remote control bomb at Chou,chorani, thesil kahaan, area of Kohlu district. This attack destroyed a truck completely, seven army personnel were killed and three wounded.

The spokesperson said that The convoy was supplying ration and ammunition to Army camp, situated in kahaan.

The spokesperson Azad Baloch furthermore said that in a separate attack, the Liberation fighters from his organization (BLA) had destroyed a transmission tower with explosives near Loralai road on Thursday night.

The Baloch Liberation Army claims these two separate bomb attacks.

The spokesperson wowed that they continued such attackes till the Liberation of Balochistan.

(English And Urdu Version)

کاہان اور رکھنی میں ہونے والے بم حملوں کی زمہ داری قبول کرلیتے ہیں: بی ایل اے

بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان آزاد بلوچ نے نامعلوم مقام سے سیٹلائیٹ فون پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا گزشتہ روز کوہلو کے تحصیل کاہان میں پاکستانی فوج پر بم حملے اور جمعرات کی شب رکھنی میں بجلی ٹاور کو بم دھماکے سے اڑانے کی زمہ داری قبول کرلی۔

آزاد بلوچ نے کہا کہ گزشتہ روز مقبوضہ بلوچستان کے ضلع کوہلو، تحصیل کاہان میں چھوچھڑائی کے مقام پر پاکستانی فوج کے 8 گاڑیوں پر مشتمل ایک کانوائے کو ہمارے سرمچاروں نے ریموٹ کنٹرول بم سے اس وقت نشانہ بنایا جب وہ کاہان میں قائم فوجی چھاونی کو خوراک و راشن اور ایمونیشن سپلائی کرنے کیلئے جارہا تھا۔ اس حملے میں پاکستانی فوج کے 7 اہلکار ہلاک جبکہ تین اہلکار شدید زخمی ہوگئے۔ ترجمان نے مزید کہا کہ دریں اثناء ہمارے سرمچاروں نے جمعرات کی شب رکھنی میں لورلائی روڈ کے نزدیک نصب بجلی کے ٹاور کو دھماکہ خیز مواد سے اڑا دیا۔ ان دونوں حملوں کی زمہ داری ہماری تنظیم بلوچ لبریشن آرمی قبول کرتی ہے۔

آزاد بلوچ نے آخر میں کہا کہ ہمارے اس طرح کے حملے ایک آزاد بلوچ وطن کے قیام تک جاری رہیں گے۔

BLA accepts the attack on Pakistani army, Due to the attack 5 personnel were killed & 6 were seriously injured: Spokesperson Azad Baloch

اتوار، جون، 14، 2020

:کوئٹہ

بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان آزاد بلوچ نے نامعلوم مقام سے سیٹلائیٹ فون کے زریعئے میڈیا کو بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ روز مقبوضہ بلوچستان کے ضلع بارکھان کے علاقے باریلی میں مغرب کے وقت ہمارے جانبازوں نے قابض پاکستانی فوج کے چھاونی کے قریب قائم چیک پوسٹ پر آر پی جی راکٹ کے گولے فائر کرکے دشمن کے اہلکاروں پر خود کار ہتھیاروں سے شدید حملہ کرکے انھیں بھاری جانی و مالی نقصان پہنچایا۔

اس حملے کے نتیجے میں قابض پاکستانی فوج کے 5 اہلکار ہلاک اور 6 زخمی کیئے گئے۔

ترجمان نے مزید تفصیلات بیان کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ روز اس حملے کے فورا بعد پاکستانی فوج نے جوابی کاروائی کرتے ہوئے ہمارے جانبازوں پر مارٹر کے گولے فائر کئے، لیکن بلوچ مزاحمتکار دشمن پر گھات لگا کر حملے کے بعد اپنے حفاظتی کیمپ کی جانب منتقل ہوگئے۔

بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان آزاد بلوچ نے بارکھان، باریلی میں پاکستانی فوج پر حملے کی زمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا، کہ بلوچ قوم کی تعاون سے بلوچ وطن پر قابض پاکستانی ریاست سے قومی آزادی تک ہماری مسلح جدوجہد جاری رہیگی۔

Baloch Liberation Army accepts the responsibility of an explosion on railway track from Dera Ghazi Khan to Karachi was blown up by our liberation fighters with explosives near Gaddai Chongi Quetta Road. The two feet section of the track was damaged. Spokesperson Azad Baloch

03 مئی 2020:

بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان آزاد بلوچ نے نامعلوم مقام سے سیٹلائیٹ فون کے ذریعے میڈیا کو بیان جاری کرتے ہوئے کہا گزشتہ روز بروز اتوار سہ پہر 3 مئی کو قابض پاکستان کے صوبے پنجاب کے زیر انتظام مقبوضہ بلوچستان کے علاقہ
ڈیرہ غازیخان سے کراچی جانے والی ریلوے ٹریک کو ہمارے سرمچاروں نے گدائی چونگی کوئٹہ روڈ کے نزدیک بارودی مواد کے ذریعے بم دھماکے سے اڑا دیا۔ جس سے پٹڑی کے دو فٹ حصے کو نقصان پہنچایا گیا۔

اس بم حملے کی زمہ داری بی ایل اے قبول کرتی ہے۔
ترجمان نے اپنے بیان میں مزید کہا ضلع ڈیرہ غازیخان میں ہمارے سرمچاروں نے پاکستان ریلوے کی پٹڑی کو بارودی مواد نصب کرکے بم دھماکے سے اڑا دیا۔

تنظیم کے ترجمان نے اپنے بیان کے آخر میں کہا کہ جہاں تک ہمارے لیئے ممکن ہو ہمارا ہدف قابض پاکستان کے تمام استعصالی ادارے ہونگے۔

ہم اس بیان میں میڈیا کےتوسط سے عام عوام کو خبردار کرنا چاہتے ہیں کہ وہ ہمارے راستے میں رکاوٹ بننے اور ریاستی فورسز و خفیہ اداروں کیلئے مخبری کرنے سے اجتناب کریں۔ خلاف ورزی کرنے کی صورت میں ہونے والے نقصانات کی زمہ داری متعلقہ شخص کے زمہ ہوگی۔

Baloch Liberation Army accepts an anti personnel mine ambush on Pakistani Occupying forces and our attack result one was killed on the spot and one wounded: Spokesperson Azad Baloch

بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان آزاد بلوچ نے نامعلوم مقام سے سیٹلائٹ فون کے ذریعے میڈیا کو بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ بروز جمعہ 3 اپریل کو ضلع سبی سے متصل کوہستان مری کے پہاڑی علاقہ کلگری سربندآف میں وطن کے جانباز سرمچاروں نے قومی وسائل کی لوٹ مار میں مصروف کمپنی کی سیکورٹی کیلئے تعینات قابض پاکستانی فوج کے مورچوں اور پانی کے چشمے کے درمیان بارودی سرنگ (اینٹی پرسنل مائن) بچھایا تھا، جس میں فوجی اہلکاروں کے پاوں کی زد میں آکر 1 اہلکار موقع پر ہلاک اور 1اہلکار شدید زخمی ہوا۔

پاکستانی فوج پر بارودی سرنگ بم کے زریعے ہونے والے اس حملے کی زمہ داری قبول کرتے ہیں۔ آزاد بلوچ

Baloch Liberation Army’s fighters targeted Pakistani Army and killed two personnel and wounded five in the Kalgari, Nilg area of Sibbi, Balochistan. BLA accepts the responsibility of this attack. BLA spokesperson Azad Baloch.

جمعہ 3 اپریل, 2020
بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان آزاد بلوچ نے نامعلوم مقام سے میڈیا کو بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ روز سبی سے کوہستان مری کی جانب کلگری، نیلغ کے مقام پر بلوچ قومی دولت تیل و گیس کی تلاش کرنے والے کمپنی کے سیکورٹی پر معمور قابض پاکستانی فوج کے ٹھکانوں پر ہمارے سرمچاروں نے خود کار ہتھیاروں کی مدد سے گھات لگا کر حملہ کیا۔

اس حملے کے نتیجے میں پاکستانی فوج کے 2 اہلکار موقع پر ہی ہلاک اور 5 شدید زخمی کیئے۔

آزاد بلوچ نے مزید کہا کہ یہ حملہ پی کے سکیل مشین گن، اے کے47 کلاشنکوف اور آر پی جی کے راکٹ گولوں کی مدد سے کیا گیا، جس میں دشمن فوج اور لوٹ مار میں مصروف کمپنی تنصیبات کو کافی جانی و مالی نقصان کے ساتھ ، ساتھ دشمن فوج کے مورچوں کو بھی شدید نشانہ بنا کے نقصان پہنچایا گیا۔

اس حملے کے بعد بلوچ مزاحمتکار کامیابی سے اپنے معفوظ ٹھکانوں کی جانب روانہ ہوکر کسی نقصان کے بغیر اپنے منزل کو پہنچ گئے۔

بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان آزاد بلوچ نے اپنے بیان کے آخر میں کہا کہ تنظیم بلوچستان کے بلوچ قومی دولت و جغرافیہ کی ہر ممکن حد تک دفاع کرکے بلوچ قومی ریاست کے تشکیل تک اپنی جدوجہد کو جاری رکھے گا۔

Create your website at WordPress.com
Get started